کد خبر ۷۷۶ ۲۵۵ بازدید انتشار : ۲۰ دی ۱۳۹۵ ساعت ۱۰:۲۲
تالی دونوں ہاتھوں سے بجتی ہے

مل جل کر کام کرنا

مل جل کر کام کرنے سے کام بھی جلدی ہو جاتا ہے اور دوسرے کو زیادہ زحمت کا سامنا نہیں کرنا پڑتا

 گرمی کا موسم تھا ہمارے نبی حضرت محمد (ص) اپنے اصحاب کے ساتھ ایک راستے گذر رہے تھے. دھوپ کی تیزی کی وجہ سے سبھی پیاس اور تھکن سے بے حا ل تھے۔

 دوپہر کا وقت ہو رہا تھا  اس لئے کھانا کھانے اور تھوڑا آرام کرنے کے لئے ایک پیڑ کے نیچے رکے تاکہ ایک بھیڑ کو ذبح کریں اور اسکو بھون کر کھائیں تاکہ بھوک مٹ سکے۔

  تب ہی آپ کے ساتھیوں  میں سے ایک بولا: بھیڑ کو میں ذبح کروں گا ،دوسرے بولا: میں  بھیڑ کی کھاں صاف کروں گا  اور تیسرے نے کہا : میں گوشت کو پکا دوں گا۔

آخر میں پیغمبر اکرم (ص) نے کہا: میں آگ جلانے کے لئے لکڑیاں جمع کروں گا جیسے ہی پیغمبر(ص) نے یہ کہا آپ (ص) کے ساتھیوں نے کہا یا رسول اللہ: آپ بہت تھکے ہوئے ہے آپ درخت کے سایہ میں آرام کریں ہم سبھی مل کر سارے کام کر لے گے۔

رسول اللہ (ص) نےاپنے ساتھیوں سے  کہا: یہ صحیح نہیں ہے کہ سبھی کام کریں اور میں بیٹھ کر آرام کروں، جاو تم سب اپنے کام میں لگ جاو اور میں جنگل سے لکڑیاں جمع کرکے لاتا ہوں اس طرح خدا ہم سے بھی خوش ہوگا۔

اورآُپ(ص) نے فرمایا: ’’خداوند عالم نے  بندوں کے درمیان کوئی فرق نہیں رکھا ہے اس لئے کسی کو یہ حق حاصل نہیں ہے کہ وہ اپنے کو دوسروں سے برتر سمجھے‘‘۔

اس کے بعد آپ جنگل گئے اور ایندھن کے لئے لکڑیاں اکھٹا کر کے لائے۔